31

بہاولپور ( ڈاکٹر محمد عاطف سے ) ایسوسی ایشن آف گریجویٹ ہومیوپیتھس پاکستان کی طرف سے ہومیوپیتھک ڈپلومہ کورس میں داخلے کے لیے بنیادی تعلیم ایف ایس سی پری میڈیکل کرنے پر سینیٹ سے منظوری کے بل کا خیرمقدم کرتے ہیں، چئیرمین ڈاکٹر عتبان محمد چوہان

بہاولپور ( ڈاکٹر محمد عاطف سے ) ایسوسی ایشن آف گریجویٹ ہومیوپیتھس پاکستان کی طرف سے ہومیوپیتھک ڈپلومہ کورس میں داخلے کے لیے بنیادی تعلیم ایف ایس سی پری میڈیکل کرنے پر سینیٹ سے منظوری کے بل کا خیرمقدم کرتے ہیں، چئیرمین ڈاکٹر عتبان محمد چوہان
ایسوسی ایشن آف گریجویٹ ہومیوپیتھس پاکستان کا اجلاس زیر صدارت چئیرمین ڈاکٹر عتبان محمد چوہان منعقد ہوا جس میں انہوں نے کہا کہ ہومیوپیتھک میڈیکل پروفیشن کی ترقی و ترویج اور حکومت پاکستان خاص طور پر سینیٹر پروفیسر ڈاکٹر مہر تاج روغانی کی خصوصی کاوشوں کو سراہا کہ ان کی خصوصی دلچسپی کی بدولت سینیٹ سے بل پاس ہوا، چئیرمین ڈاکٹر عتبان محمد چوہان نے مزید کہا کہ ہم سینیٹر مہر تاج روغانی کے انتہائی شکر گزار ہیں کہ اب ہومیوپیتھک میڈیکل سائنس پاکستان میں اپنا خاص مقام حاصل کر سکے گی۔
اجلاس میں اظہار خیال کرتے ہوئے انفارمیشن سیکرٹری ڈاکٹر فہیم ہادی نے حکومت پاکستان سے مطالبہ کیا کہ سرکاری سطح پر ہومیوپیتھک ڈاکٹرز کی بھرتیوں پر سے پابندی کو فی الفور ختم کیا جائے تاکہ سرکاری سطح پر بھی کوالیفائیڈ ہومیوپیتھک ڈاکٹرز کو ملازمتوں کے مواقع حاصل ہو سکیں اور مریضوں کو بھی سرکاری سطح پر ہومیوپیتھک طریقہ علاج کی سہولیات دستیاب ہوں سکیں۔
ڈاکٹر اسد اللہ خان جنرل سیکرٹری ایسوسی ایشن آف گریجویٹ ہومیوپیتھس نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہومیوپیتھک طریقہ علاج انتہائی موثر اور محفوظ ہے لیکن بدقسمتی سے پاکستان میں اس طریقہ علاج کو ہمیشہ سے نظر انداز کیا جاتا رہا ہے، یہاں ہومیوپیتھک میڈیکل کالجز میں ہومیوپیتھک ڈپلومہ کے معیار کو بہتر نہیں بنایا گیا تھا ،وہی دوسری طرف یونیورسٹیوں سے ہومیوپیتھی میں اعلی تعلیم یافتہ ڈگری ہولڈرز ہومیوپیتھس ڈاکٹرز کو سرکاری سطح پر کسی قسم کے روزگار سے محروم رکھا گیا ہے۔
پچھلے 55 سالوں سے ہومیوپیتھک، یونانی، ایوردیدک ایکٹ 1965 میں بہتری کے لیے کوئی بھی پیش رفت نہیں کی گئی تھی اب معزز سینیٹر پروفیسر ڈاکٹر مہر تاج روغانی نے ہومیوپیتھک میڈیکل سائنس میں بہتری کے لیے ہومیوپیتھک کورس میں داخلہ کی بنیادی تعلیم ایف ایس سی پری میڈیکل لازمی قرار دئیے جانے کے ایکٹ میں تبدیلی کی جو قانون سازی کی ہے۔ ایسوسی ایشن آف گریجویٹ ہومیوپیتھیس پاکستان اس کا خیر مقدم کرتی ہے اور تہہ دل سے شکر گزار ہے۔ کیونکہ اس فیصلہ سے پاکستان میں ہومیوپیتھک طریقہ علاج کا وقار اور معیار بلند ہو گا۔
ایسوسی ایشن آف گریجویٹ ہومیوپیتھس پاکستان کے صدر ڈاکٹر رانا طارق محمود، ڈاکٹر محمد عاطف رضا و دیگر عہدیداران نے گفتگو کرتے ہوئے مزید کہا کہ ملک میں ہومیوپیتھک چار سالہ ڈپلومہ ڈی ایچ ایم ایس کورس کو ختم کر کے اس کی جگہ پر تمام ہومیوپیتھک میڈیکل کالجز اور یونیورسٹیوں صرف ہومیوپیتھک ڈگری بی ایچ ایم ایس کا اجراء کیا جائے اور ہومیوپیتھک میڈیکل کالجز کو ڈگری سطح کی تعلیم اپنا کر معیار بہتر بنانے کا پابند کیا جائے۔جبکہ پاکستان میں پہلے ہی مختلف یونیورسٹیوں میں ہومیوپیتھک ڈگری بی ایچ ایم ایس، ایم فل اور پی ایچ ڈی کی بھی تعلیم دی جا رہی ہے جو کہ ہائر ایجوکیشن کمیشن پاکستان سے منظور شدہ ہے۔
مزید یہ کہ متعدد بی ایچ ایم ایس ڈگری گریجویٹس پاکستان اور بیرون ممالک سے میڈیکل شعبے میں ایم فل اور پی ایچ ڈی کر چکے ہوئے ہیں جو ہومیوپیتھی شعبہ میں اپنی خدمات سرانجام دینے کے لیے تیار ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں