14

*170 سالہ پرانا ضلع جھنگ کو ڈویژن کا درجہ دلوانا وقت کی اہم ضرورت ہے منتخب سیاسی قائدین کو ڈویژن بنوانے کا اپنا وعدہ پورا کرنا ہو گا* ۔بانی تحریک ڈاکٹر شیر بہادر نول

جھنگ (چوہدری عمرحیات) جھنگ ڈویژن بناو تحریک کے زیر اہتمام مرکزی کابینہ کی میٹنگ ہوئی جس میں جھنگ کو ڈویژن بنا کر جنوبی پنجاب میں شامل ہونے کے حوالے سے لائحہ عمل تیار کیا گیا مرکزی قائدین میں بانی تحریک ڈاکٹر شیر بہادر نول، اظہر امیر خان،قاضی عباس اظہر،عمران بلوچ،مہر فرید بھوجوآنہ،مہر اسلم سپرا،ڈاکٹر تنویر،شبیر انصاری، ملک شفقت اللہ،خبیب بلوچ،عبدالقدوس کھوکھر،محمد بلال،حاجی شعیب و دیگر نے شرکت کی اس موقع پر بانی جھنگ ڈویژن بناو تحریک ڈاکٹر شیر بہادر نول نے کہا کہ جھنگ کے موجودہ منتخب اراکین اسمبلی 2018 میں کیے جانے والے جھنگ کو ڈویژن بنوانے کا وعدہ پورا کرنے کا وقت آن پہنچا ہے لیہ،بھکر کی نسبت ضلع جھنگ تاریخی حیثیت رکھنے کے ساتھ ڈویژن کیلیے تمام لوازمات پورے رکھتا ہے جبکہ لیہ اور بھکر جھنگ کی نسبت پسماندہ اضلاع ہیں 32 لاکھ سے زیادہ آبادی رکھنے والے ضلع جھنگ کو ڈویژن کا درجہ دلوا کر رہیں گے جھنگ کے اراکین اسمبلی میگا پروجیکٹ کیلیے فنڈز لانے میں بری طرح ناکام ہوئے ہیں اور جھنگ کو ڈویژن بنوانے کا مقدمہ پروفیشنلی طور پر نہیں لڑ رہے آنے والے بلدیاتی الیکشن میں جن گروپس میں موجودہ اراکین اسمبلی شامل ہونگے انکو ووٹ نہیں دیا جائے گا انکے خلاف عوامی سطح پر کمپیئن چلائی جائیں گی جھنگ ڈویژن بناو تحریک ضلع بھر سے بلدیاتی انتخابات کیلیے نوجوانوں کو کھڑا کرے گی تاکہ وہ حکومت کا حصہ بن کر اپنے ضلع کی ڈویلپمنٹ میں کردار ادا کر سکیں گے جھنگ میں مکمل ہونے والے پروجیکٹس میں سب سے اہم رول جھنگ ڈویژن بناو تحریک کے نوجوانوں اور میڈیا نے ادا کیا ہے جھنگ کے وکلاء،صحافی،ڈاکٹرز،پروفیسرز،سٹوڈنٹس،مزہبی،سیاسی جماعتوں کو جھنگ ڈویژن بنوانے کیلیے متحد ہو جانا چاہیے جو کہ وقت کی اہم ضرورت ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں